عالمی خبریں

یوکرین جنگ سے بچنے کے لیے نیٹو کیلئے اپنی بڈ سے دستبردارہوسکتا ہے- یوکرینی سفیر

خلیج اردو: یوکرین روس کے ساتھ ممکنہ جنگ سے بچنے کے لیے نیٹو میں شامل ہونے کی اپنی بڈ/ بولی سے دستبردارہو سکتا ہے، بی بی سی نے برطانیہ میں ملک کے سفیر کے حوالے سے کہا کہ یوکرین کی سرحدوں پر روسی فوجیوں کی تعیناتی کے جواب میں ماسکو کو ایک بڑی رعایت مل سکتی ہے-
یوکرینی سفیر Vadym Prystaiko نے بی بی سی کو بتایا کہ یوکرین بحر اوقیانوس کے فوجی اتحاد میں شامل ہونے کے اپنے ہدف کے حوالے سے "لچکدار” ہونے کے لیے تیار ہے،تاہم یہ اقدام روسی صدر ولادیمیر پوتن کیمطابق جنگ کا محرک ہوگا۔

پریسٹیکو کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا کیف نیٹو کی رکنیت پر اپنا موقف تبدیل کر سکتا ہے، تو انہوں نے کہا کہ "ہمیں – خاص طور پر اس طرح کی دھمکیاں دی جا سکتی ہیں، اس کے ذریعے بلیک میل کیا جا سکتا ہے، اور اس کی طرف دھکیل دیا جا سکتا ہے،”

یوکرین نیٹو کا رکن نہیں ہے لیکن اس کا 2008 سے ایک وعدہ ہے کہ اسے بالآخر اس میں شامل ہونے کا موقع دیا جائے گا، یہ ایک ایسا قدم ہے جو امریکی قیادت والے اتحاد کو روس کی سرحد تک لے آئے گا۔

پیوٹن کا کہنا ہے کہ اتحاد کے ساتھ یوکرین کے بڑھتے ہوئے تعلقات اسے روس کو نشانہ بنانے والے نیٹو میزائلوں کے لیے لانچنگ پیڈ بنا سکتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ اس کو روکنے کے لیے روس کو سرخ لکیریں لگانے کی ضرورت ہے۔

روس نے حالیہ ہفتوں میں 100,000 سے زیادہ فوجیوں اور بھاری ہتھیاروں کو یوکرین کے فاصلے کے اندر منتقل کیا ہے، جس نے امریکہ اور اس کے نیٹو اتحادیوں کو خبردار کیا ہے کہ حملہ یقینی ہے۔

ماسکو اس بات کی تردید کرتا ہے کہ وہ حملے کی منصوبہ بندی کر رہا ہے اور اسے فوجی مشقیں کہا ہے، لیکن اس نے تحریری مطالبات جاری کیے ہیں کہ نیٹو یوکرین سمیت مشرق کی جانب مزید توسیع کو ترک کرے۔ نیٹو ارکان نے اس مطالبے کو مسترد کر دیا ہے۔

وائٹ ہاؤس نے کہا کہ امریکی صدر جو بائیڈن نے اتوار کو اپنے یوکرائنی ہم منصب ولادیمیر زیلنسکی سے بات کی اور بحران کے حل کے لیے سفارتی کوششیں جاری رکھنے پر اتفاق کیا۔

متعلقہ مضامین / خبریں

Back to top button